Total Pageviews

Sunday, February 12, 2012

dahshatgard ka urdu anuwad

دہشتگرد







پہلے ٹی وی پر اس کی تصاویر دكھلاي گئیں، پھر خبریں - خطوط نے اس کے بارے میں لانتے - ملامتے کی تو شہر کا ماتھا ٹھنكا.
'' ارے بھئیا، غضب ہو گیا! عیسی میاں کا بیٹا مسا سسرا دہشت گرد نکل گیا.''
شہر کے سب سے پرانے دھنيا عیسی میاں کا بیٹا موسی عرف مسا اور دہشت گرد!
'' ای سسرے ميوا سببے اتكبادي هووت ہیں!'' بسناتھ مسرا نے تو باقاعدہ پوری مسلم قوم کو ہی دہشت گرد ثابت کر دیا.
شہر سے نکلنے والے اخبار 'ترشول' کے صفحہ اول کا عنوان تھا 'شہر میں پنپتا دہشت گردی'. ایڈیٹر ترلوكچد نے موسی کے بہانے اپنے 'خصوصی نامہ نگار' کے توسط سے شہر، ملک اور پھر امریکہ کا بالادستی قبول کر رہی پوری دنیا میں پھیلے دہشت گردی کا فوری طور پر - پھرت جائزہ لیا تھا.
اخبار 'ترشول' کا اصرار تھا کہ ملک بھر میں پھیلے مدرسوں کی باریکی سے جانچ کرائی جائے. 'ج़هاد' کا زہر ان ہی مدرسوں سے مذہبی - تعلیم کی آڑ لے کر دی جا رہی ہے. انہیں اقلیتی کہہ - کہہ کر اکثریت کے ساتھ اس ملک میں سوتےلا سلوک کیا جا رہا ہے. یہ لوگ ہماری سیاسی پارٹیوں کو بلےكمےل کرتے ہیں.
کچھ سیاسی جماعتیں سوارتھوش ان تتھاكتھك اقلیتوں کے دل میں اکثریت کا ڈر بیٹھا کر ان کے ووٹ کھینچ لیتے ہیں.
موسی کی خبر سن - گنكر میں بھی کافی حیرت تھا.
موسی کو میں ذاتی طور پر جانتا تھا.
جانتا بھی کیوں نہ، موسی میرا سهپاٹھي تھا اور لگوٹيا بھی.
ایسا دوست، جسے خوشی - خوشی کوئی اپنا ہمراز بنا لے.
ایسا ميت، جس سے ہم اپنا کچھ نہیں چھپاتے.
جس سے اپنے دل کی کہہ کر ہم کشیدگی - آزاد ہو جاتے ہیں.
ایک عمر کے بعد انسان اس طرح کے رشتے کھو بیٹھتا ہے.
آگے جا کر انسانی - تعلق، تجارتی، صنعتی، سیاسی یا سفارتی سمبدھو کے نام سے پكارے جاتے ہیں. تب ہر تعلق کے پیچھے بنتے - بگڑتے اتحاد، مفاد - نقصان، فائدہ - نقصان وغیرہ پیمانے اہم رول ادا کرتے ہیں.
مسا عرف موسی ایک مسلمان نوجوان تھا.
بچپن میں میں مسلمانوں کے بارے میں یہی جانتا تھا کہ یہ اچھوت ہوتے ہیں. ان کا 'ختنہ' کیا جاتا ہے. اورگجے़ب جیسے مغل بادشاہوں کے ظلم سے گھبراكر یا پھر لالچوش بہت ہندو مسلمان ہو گئے.
تاریخ کے استاد اپادھیائے سر ایک سناتني ادھیڑ تھے. وہ مغل - دور کی تاریخ پڑھاتے وقت اتنا ادوےلت ہو جاتے کہ مگلو کی ساری غلتيو کا کریڈٹ کلاس میں موجود انے - گنے مسلمان لڑکوں پر ڈال دیتے تھے.
تاریخ کا پیریڈ لنچ - بریک کے بعد ہوتا. ادھر اپادھیائے سر کلاس میں داخل کرتے ادھر سکول کے قریب واقع مدینہ - مسجد سے دپهر کی نماز کی اذان گونجتی. -'' اللہ اکبر ....''
اپادھیائے سر طلباء کو بتاتے '-'' بچوں سنا تم نے مسجد کے مللے کی باگ! اس ملک کے مسلمان ابھی تک مغل شہنشاہ اکبر کی بڑاي کرنا نہیں چھوڑے ہیں. ان لوگوں کے منہ سے اپنے چھترپتی شواجی یا مهاراا پرتاپ کی بڑاي تم کبھی نہیں سنے ہو. یہ لوگ آج بھی اکبر - بابر کی بڑاي گاتے ہیں.''
جب تک اذان ہوتی رہتی، اپادھیائے سر برا سا منہ بنائے رہتے اور کلاس ٹھهاكے سے بھر جاتی.
میں ایسے وقت ان تین سهپاٹھيو کو دیکھا کرتا، جن کا جرم صرف اتنا رہتا کہ وہ مسلمان گھروں میں پیدا ہوئے ہیں.
وہ ایک گروپ بنا کر الگ - تھلگ رہا کرتے تھے.
اس گروپ کو جماعت کے دبنگ لڑکوں نے نام دیا تھا - 'کے جی - گروپ'
'جی' یعنی کہ 'كٹا - گروپ'.
موسی اس گروپ میں شامل نہیں تھا، شاید اسی لیے مجھے عزیز تھا.
وہ کلاس کی اکثریت لڑکوں کے ساتھ رہا کرتا تھا اور انہیں کی طرح اس گروپ کے لڑکوں کو 'کے جی' کہا کرتا تھا.
موسی کے پاس غضب کا 'سےس آف هيومر' تھا. جس طرح ایک پنجابی بڑی بےتكللفي کے ساتھ اپنے ہی اوپر چٹکلے اور پھبتيا سنا لیا کرتے ہیں اور بداس ہنس لیتے ہیں، کچھ ایسی ہی پھ़ترت کا مالک تھا موسی.
موسی کے علاوہ دوسرے مسلمان لڑکے جب پیشاب کرتے تو چھپ کر کرتے.
جبکہ موسی ہمارے ساتھ ٹايلےٹ جایا کرتا. شرارتی تو وہ تھا ہی. ضرورت پڑنے پر سب کے سامنے ہی پینٹ کی ج़پ کھول کر موتنے لگتا.
جن دنوں ہم کورس کی کتابوں میں ماتھا كھپاتے تھے، موسی نئی - نئی شےتانيا ایجاد کرنے میں لين رہا کرتا.
موسی کی انہی كارستانيو کی وجہ سے کلاس کے تمام بچے اسے 'مسا' کہتے.
'مسا' یعنی کہ چالاک چوہا. ایسا چوہا جو كترنے کو سارا گھر كتر جائے اور کسی کو کانوں - کان خبر نہ ہو. شرارت میں بڑے - بڑوں کے کان كترتا تھا مسا.
کلاس - شكش़اك تھے مشرا سر.
ان کے دو کام وہ بغیر ان کی اجازت کے کر دیا کرتا تھا.
اول تو اسکول کے پیچھے کی جھاڈ़يو میں گھس کر بیشرم کی ہری ٹهنيا توڑ لانا اور دوجا مشرا سر کے لئے كھےني کا انتظام کرنا.
مجھے تو ایسا لگتا ہے کہ مسا بڑی کم عمر سے ہی كھےني وغیرہ کا شوق فرمایا کرتا تھا.
كھےني تو كھےني، لوگوں نے اسے چپراسی رام جی کی طرف سے پھینکی گئی ادھجلي بيڈ़يا سلگاكر پیتے بھی دیکھا تھا.
تب اسکولوں کو مکتب کہا جاتا تھا. ان پاٹھشالاو میں اسکول - يونيپھارم، کلاس - ورک، ہوم ورک، یونٹ - ٹیسٹ جیسے ناشائستہ چوچلے کہاں تھے؟
بس، سہ ماہی، چھماهي یا سالانہ امتحان ہوا کرتی تھیں اس وقت.
جس میں اچھے - اچھے پھننےكھا بچے فیل ہو جایا کرتے تھے.
ابھبھاوكگ اساتذہ کو لائسنس دے دیتے تھے کہ وہ بچوں کو بہتر بنانے کے لئے چاہیں تو پیٹ - پیٹ کر ادھ مرا کر دیں. مار کے ڈر سے بھوت بھی بھاگتے ہیں، ہم تو پھر بچے ہی ٹھہرے. سہ ماہی - چھماهي امتحان میں فیل ہونے اور پٹ - پٹ کر بےذذات ہونے کے بعد ہمیں اك़ل آ جاتی اور تھک - ہار کر ہمیں فیصلہ لینا ہی پڑتا کہ اب پڑھنے اور رٹنے کے علاوہ کوئی آپشن نہیں بچا. جس کے نتیجے میں سالانہ امتحان میں ہم باعزت نمبرز سے پاس ہو جایا کرتے تھے.
تب والدین کو اپنے بچوں سے نوے - نننانبے فیصد پوائنٹس کی امید نہ ہوتی تھی.
مسا کا دماغ تیز تھا.
سال بھر وہ تكڑمے کرتا لیکن امتحان قریب آنے پر اتنا ضرور پڑھ لیتا کہ گاندھی - ڈویژن سے پاس ہو جاتا.
اگر وہ پڑھنے میں توجہ دیتا تو بلاشبہ اچھے نمبر لاتا.




مسا دہشت گرد بن گیا.
یہ ایک ایسا خبریں تھا جس نے میرے دماغ کے جوڑ - جوڑ ہلا کر رکھ دیئے تھے.
اتنا ملنسار، هردل - عزیز، سماجی لڑکا موسی کسی دہشت گرد تنظیم کے لئے کام کیوں کرنے لگا؟
وہ میرے گھر آیا کرتا تھا.
ایک واقعہ پیش آیا ایسی کہ اس کے بعد اس نے میرے گھر چائے - ناشتہ کرنا چھوڑ دیا تھا.
ہوا یہ کہ میری ماں ایک روڈھ़وادي، روایتی مذہبی رجحان کی خاتون تھیں. وہ قطعی نہیں چاہتی تھیں کہ کوئی ودھرمي یا کہ اچھوت - چماروں کے سنگ ان کے بچے دوستی لوڈ، اتارنا. ان کے ساتھ اٹھے - بیٹھیں. انہیں اپنے گھر بلاے یا ان کے گھروں میں جائیں.
والد صاحب کے دپھتري ساتھیوں کے لئے گھر میں الگ سے کچھ برتن تھے. یہ کپ - پلیٹ، گلاس اور تشتريا الگ رکھی جاتی تھیں. انہیں ماں نہ تو چھوتی تھیں، نہ ماجتي - دھوتی تھیں. جوٹھے برتن گدھاتے پڑے رہتے جب تب کہ نوکرانی آکر انہیں نہ اٹھاتی.
ایک بار مسا میرے گھر آیا تو میرے بلانے پر اندر چلا آیا.
ماں نے چنے کی گھگھني بنائی ہوئی تھی.
گھگھني مجھے بہت پسند تھی.
مجھے مسا کے ساتھ فوری طور پر کھیل کے میدان جانا تھا.
اس لئے میں نے کہا کہ ناشتہ کر کے چلتے ہیں.
ماں نے مجھ سے مسا کی ذات پوچھی.
میں نے بتایا کہ ميا بچہ ہے مسا.
ماں کا دماغ خراب ہو گیا.
کیا کرتیں، لڑکے کا دوست ہی ٹھہرا.
انہوں نے موسی کے لئے چینی کی تشتري میں گھگھني بھجواي اور میرے لئے سٹیل کے پلیٹ میں.
موسی کے لئے چینی کے کپ میں چائے تھی اور میرے لئے سٹیل کے کپ میں.
موسی کے لئے کانچ کے مطلق صبح گلاس میں پانی دیا اور مجھے سٹیل کے گلاس میں.
موسی کی گہری نگاہیں اس مختلف حالتوں کو بھانپ گئیں.
اس نے بہانہ کیا کہ اس کا پیٹ ٹھیک نہیں ہے.
وہ کچھ بھی نہ لے گا.
پھر جب ہم گھر سے باہر نکل رہے تھے تو سامنے گلی میں کھڑکی کے نیچے کے گھورے پر کتوں کے سامنے گھگھني کی تشتري پھینکی گئی.
کتے آپس میں لڑتے ہوئے گھگھني کھانے کے لئے جھپٹ پڑے.
موسی نے بہت برا محسوس کیا تھا.
اس نے مجھ سے صاف کہہ دیا کہ اگر وہ کسی ہنگامی حالت میں میرے گھر آتا بھی ہے تو کچھ کھائے گا یا پےگا نہیں. اگر میری بہت ہی اچھا ہو کچھ اسے کھلایا جائے تو ہوٹل میں کیا نہیں ملتا ہے.
ویسے میں جب بھی مسا کے گھر جاتا تو اس کی امی کے ہاتھوں بنی پھرنی، سےوي، هلا وغیرہ بڑے پیار سے کھایا کرتا تھا.
موسی مجھے بہت مانتا تھا.
میرے لئے وہ جان دیا کرتا تھا.
وہ دہشت گرد کیسے بن گیا، میری سمجھ میں نہیں آ رہا تھا.
وہ ایک خوش مزاج انسان تھا، ایک دم جندادل.
کبھی دکھ بھی ہوتا تو صرف اسی بات پر کہ لوگ اسے اپنے جیسا ایک عام انسان یا شہری کیوں قبول نہیں کرتے؟ اسے دیکھ کر لوگ کیوں ہندو - مسلمان جیسی باتیں کرنے لگتے ہیں.
موسی یعنی مسا پڑھائی کا دشمن تھا، لیکن شہر - محلے کی ثقافتی - مذہبی سرگرمیوں میں بڑھ - چڑھ کر حصہ لیا کرتا تھا.
سرسوتی - پوجا، درگا - پوجا، گنیش - پوجا، تلسی - جینتی، هولكا - دہن ہو یا پھر دشهرا میں راون - دہن کے پروگرام.
محلے کے بچوں نے ایک تنظیم بنائی تھی -'' بال - کلب''
بال - کلب کا سب سے سرگرم رکن ہوا کرتا تھا موسی.
کم سے کم پیسے اور ردی کی چیزوں سے وہ ایسی فورم - سجا کرتا کہ ہمارے چھوٹے سے گنیش بھگوان ایسے نظر آتے جوں اپنے ننھے سے چوہے پر سوار ہو کر وہ ہمالیہ کی چوٹیوں کے درمیان سے راستہ بناتے ہوئے چلے آ رہے ہوں.
روئی اور لکڑی کے برادے سے وہ ہمالیہ کا کمال سین ​​بنا دیا کرتا تھا.
دشهرے میں راون کے پتلے بھی اسی کے دماغ سے بنائے جاتے.
ایک بار راون کو ہم لوگوں نے شعلے کے گببر - سگ جیسا بنا دیا تھا.
محلے کے جوشی بھیا جو کہ ایک بڑے اخبار کے نامہ نگار تھے، انہوں نے ہمارے گببر - سگ جیسے راون کے بارے میں اس وقت خبریں شائع کرایا تھا.
جوشی بھیا آر ایس ایس کے سرگرم کارکن تھے.
مسا کی ثقافتی پروگراموں میں شرکت کی وجہ سے جوشی بھیا اسے پسند کرتے.
مسا بھی ان کا بہت احترام کیا کرتا تھا.
دیکھتے - دیکھتے وہ جوشی بھیا کا مرید بن گیا تھا.
ایک دن اس نے بتایا کہ میں بھی رام - مندر پراگ میں لگنے والی آر ایس ایس کی برانچ میں آیا کروں. وہاں جوشی بھیا کئی دل لگی کھیل کھلاتے ہیں.
میرا گھر اري - سماجی تھا اور میرے بڑے بھیا جو کہ جوشی بھئیا کے سهپاٹھي تھے، وہ بائیں بازو کی نظریات کے تھے.
کامریڈ پردیپ اور جوشی بھیا میں اکثر گھنٹوں بحثیں ہوا کرتی تھیں.
جوشی بھیا میرے بھائی کامریڈ پردیپ کو 'دگاباذ کمیونسٹ' کہا کرتے. جن لوگوں نے بھارت - چین جنگ کے وقت ملک کے ساتھ دھوکہ کیا تھا. میں بھی جوشی بھئیا کے اس بیان کا حامی تھا کہ کمیونسٹ غدار ہوتے ہیں.
'' بس 'تاریخی - بھولیں' کیا کرتے ہیں کامریڈ لوگ. کوئی مسئلہ آئی نہیں کہ لگیں گے چینی اور روسی کتابوں کے صفحے پلٹنے کہ ایسی حالت میں لےنن نے کیا کہا تھا، ماو نے کیا کہا، ستالن نے کیا کیا اور پھر گرباچوو نے تو انہیں ڈبو ہی دیا!''
جوشی بھیا ملک - محبت اور ہندو - جاگرن کے حق میں تھ. موسی ان سے بہت متاثر تھا. وہ ان کے اثرات میں آکر تكبديا بھی کرنے لگا تھا. جس میں ملک - محبت کا جذبہ رہتی اور کشمیر کی حفاظت کے لئے خون بہانے کی باتیں ہوا کرتی تھیں. جب وہ پاکستانیوں کو بھون کر کچا چبا جانے والی نظم پڑھتا تو جوشی بھیا گد - گد ہو جاتے اور اٹھ کر مسا کو گلے لگا لیتے تھے.
موسی نے ان تكبديو کی وجہ سے خود کو شاعر مان لیا تھا اور موسی بھارتی کے نام سے متحدہ کی میگزین میں اس کی كوتاے شائع کرتی تھیں.
آر ایس ایس کی برانچ میں موسی کو راشٹربھكت شہری کا درجہ ملا ہوا تھا.
شاخ میں ملک کے تمام مسلمان نوجوانوں سے اسی طرح کی الوطنی کی توقع کی جاتی تھی. گھرم - سیکولر کی مخالفت کرتے ہوئے مسلمانوں سے یہ امید کی جاتی کہ وہ تمام یونین کے ساتھ شجڑكر راشٹروادی ہو جائیں اور اہم - دفعہ میں شامل ہو جائیں.
لیکن موسی زیادہ دنوں تک جوشی بھئیا کے سمموهن میں پھنسا نہیں رہ پایا.
یہ مڈل - كمڈل کی سیاست کے دن تھے.
پورے ملک میں عجیب ماحول بن گیا تھا.
غربت، بھوک، بے کاری، جرم، بدعنوانی وغیرہ سلگتے مسائل متحدہ ª يي - سکرین سے غائب ہو چکے تھے. اب لوگوں کو صرف مندر چاہئے تھا یا پھر مسجد ...
موسی ایودھیا میں رام جنم بھومی مندر بننے کے حق میں تھا لیکن بابری مسجد ڈھهاكر نہیں.
مکمل جواب - بھارت میں 'قسم رام کی کھائیں گے، مندر وہیں بنائیں گے!' 'بچہ - بچہ رام کا، جنم بھومی کے کام کا!' اور 'جيشريرام!' جیسے گگن - بھیدی نعرے گونج رہے تھے.
ایسے ہی چھ دسمبر بانبے کے دن بابری - مسجد ڈھها دی گئی.
جمہوریت کا سربراہ دکھی کرنسی میں ٹےسے بهاتا رہا -'' میرے ساتھ دھوکہ ہوا! مجھے ریاست - حکومت نے اندھیرے میں رکھا!''
بابری - مسجد کیا ڈھهي، موسی اداس رہنے لگا تھا.
ملک ایک بار پھر فسادات کے زد میں آ گیا.
ممبئی میں داد کے گرگو نے دھماکہ کیا.
مجھے یاد ہے کہ سات دسمبر بانبے کے دن، موسی مجھے ساتھ لے کر جوشی بھیا کے گھر پر لے گیا.
جوشی بھیا شانت کرنسی میں بیٹھے تھے. ان کے چہرے پر کام مکمل ہونے کا اطمینان تھا اور تھی ایک لامتناہی جنگ کے ایک چھوٹے سے مرحلہ کے آگے کی حکمت عملی طے کرتی ہوس ...
جوشی بھیا کے سامنے ہم کافی دیر چپ چاپ بیٹھے رہے.
مسا کے چہرے پر اكروشجني تلملاهٹ دیکھ جوشی بھیا نے خاموشی توڑی -'' میرے پاس پکی خبر ہے کہ یونین کے لوگوں کو، یہاں تک کہ بڑے لیڈروں کو بھی اس بات کی معلومات نہیں تھی کہ ڈھانچہ گرا دیا جائے گا.''
موسی خاموش بت بنا بیٹھا رہا.
پھر وہ اٹھ کھڑا ہوا.
مجھ سے کہا -'' چلو!''
ہم لككھي کی چائے گمٹي میں آ بیٹھے.
بس - سٹےڈ میں لككھي کی چائے - گمٹي تھی.
لككھي ہمارا سهپاٹھي تھا، لیکن باپ کے اسمي مر جانے کے بعد وہ اپنی تعلیم جاری نہ رکھ پایا اور آبائی - دکان سمبھالنے لگا.
لككھي چاے بنا رہا تھا.
موسی اسے چائے بناتے بت بنا تاک رہا تھا.
اس کے بعد موسی میں عجب تبدیلی ہوا.
ہم اس وقت بی اے کے طالب علم سابق تھے.
اب موسی میرے بڑے بھائی کامریڈ پردیپ کی بےٹھكي اٹینڈ کرنے لگا تھا.
پردیپ بھائی سے وہ ملک - دنیا کی سیاست اور دیگر مسائل پر گھنٹوں بتياتا رہتا.
جب وہ میرے ساتھ ٹہلتا تو کئی طرح کے سوالات سے جوجھتا رہتا -'' یار بھائی ...!''
'یار بھائی!' موسی کا تکیہ - کلام تھا.
'' مانا کہ وہ لوگ فسطائی ہیں، ودھوسك ہیں. وہ اپنی من مانی کر لیا کرتے ہیں. ایسے خطرناک وقت میں ہمارے یہ بائیں کامریڈ بھائی کوئی 'ایکشن' نہ کرکے صرف بیان بازی کرتے ہیں. یہ کامریڈ 'گراس - روٹ لیول' پر پيڈ़تو کی مدد نہ کر صرف مخالفت - کارکردگی کا کون سا طریقہ اختیار کرتے ہیں، میری کچھ سمجھ میں نہیں آتا. کسی واقعہ کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کرنے سے پہلے یہ کامریڈ ایک - دو دن تک بند کمرے میں گہری - مترا کرتے ہیں. پھر جب حالات کنٹرول سے باہر ہو جاتی ہے، تب ان کا بیان آتا ہے کہ یہ ایک بدقسمتی بات ہے اور پارٹی اس کی مذمت کرتی ہے. ایسے میں تم ان لوگاے سے کیا توقع کرو گے؟ اس ملک کے مسلمان آخر جائیں تو جائیں کہاں؟''
میں اسے سمجھاتا کہ تم ناحق اپنا دماغ خراب کئے رہتے ہو.
یہ سب اقتدار کے ایوانوں کی سیاست ہے.
ساری دنیا دیکھتے - دیکھتے امریکہ کی غلام ہوئی جا رہی ہے اور ہمارا ملک ابھی بھی وہی ہندو - مسلم مسئلہ سے دو - چار ہے.
لیکن موسی میری بات سے اتفاق نہ ہوتا.
وہ چیخ پڑتا -'' یار بھائی! تیرے ساتھ یہ پرابلم نہیں ہے کہ تجھے خود کو ملک - پرست ثابت کرنے کو کوئی نہیں کہتا. ہم مسلمانوں کو اس ملک میں ہمیشہ سے شک کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے.
ہمیں پاکستان - پرست سمجھا جاتا ہے. ہم سے ہمیشہ ملک - عقیدت کا ثبوت مانگا جاتا ہے. تم نہیں سمجھو گے ہماری درد!''
جلد ہی موسی کا کامریڈ پردیپ سے اور بھارتی بائیں بازو کی سیاست سے موهبھگ ہو گیا.



ہم دونوں نے ساتھ - ساتھ بی اے کیا.
اس کا پوائنٹس - فیصد کافی کم تھا. بس یوں سمجھو کہ گاندھی - ڈویژن سے پاس ہوا تھا. موسی کافی اتمكےدرت ہو گیا تھا اور اس نے اپنی تعلیم کو روک دے کر اپنے ابو کی دکان سمبھالنے کا فیصلہ کیا تھا.
میرے والد نے مجھے جبل پور پيےسسي کی کوچنگ کرنے کے لئے بھیج دیا اور پھر میں کیریئر کے لئے یوں دیوانہ بنا کہ مجھے دین - دنیا کا ہوش نہ رہا.
اس درمیان جب بھی میں گھر آتا تو گھومتے - ٹہلتے عیسی - ميا کی رجاي - گددے کی دکان پر آ کر بیٹھتا.
ہمارے داخلہ - شہر میں ان دنوں تحصیل سے ضلع بنانے کی سیاست گرماي ہوئی تھی.
نت - نئی خدشات، افواهو، بدلتے سیاسی اتحاد سے بھرپور تھا ماحول!
آس پاس کی کوئلہ کانوں کی وجہ سے یہ ایک کاروباری شہر ہے. رقم - دھاني سے پرپوور. موجودہ ضروریات کی تازہ ترین اشیا یہاں بازار میں دستیاب ہیں.
اسی طرح ملک کے سربراہ نظریات کی نمائندگی کرنے والی تمام سیاسی پارٹیوں کی شاخیں اس شہر میں ہیں. گاندھی - نہرو، اندرا - راجیو، سونیا - راہل والی کانگریس کا یہاں تسلط ہے. پرانے وکلاء اور کچھ دانشوروں میں لوهياواد کے وائرس نظر آتے ہیں. غیر مطمئن کانگریسی گروپ راكاپا میں جاتا دکھائی دیتا ہے. دلتوں اور مسلمانوں کی مشترکہ ذاتوں کے درمیان كاشي - مایاوتی براڈ بی ایس پی، جواب - پردیش سے ادھر آ بسے یادوئوں اور پٹےلو کے درمیان ملائم والی سماج وادی پارٹی، اکثریت نوجوانوں میں بالا صاحب والی شیوسینا، كٹيار والی بجرنگ - دل، سنگھل والی وشو ہندو پریشد اور بنيا - بامنو کے درمیان اڈواي - اٹل کی بی جے پی جیسی پارٹياے کا وجود صاف دكھلاي دیتا ہے.
پہلے - پہل اس شہر میں ایک ہی مندر تھا، دیوی - ماں کا مندر. پھر جب یہاں مارواڑي آ کر بسے تب شہر کے وسط میں شاندار رام - مندر 'بنا، جس کے پراگ میں صبح - شام سیل لگنے لگیں.
پہلے یہاں ایک چھوٹے کمرے میں مسجد بنی، پھر دیکھتے - دیکھتے اس شہر میں تین مساجد، دو عید گاہ، ایک كبرستان، ایک مزار بن گئی.
آج شہر میں تین چرچ، دو گرودوارے، سینکڑوں مندر، دو سنیما - هال، پانچ پیٹرول - پمپ، آٹھ - دس نرسنگ - ہوم، درجنوں دوا کی دکانیں ہیں.
پہلے جہاں صرف ایک ضلع مکتب تھی، اب اسی شہر میں کئی سرکاری سکول، انگریزی ذریعے کی کئی نجی تعلیم - دکانیں، انجمن اسکول، مشنری اسکول اور دو سرسوتی تعلیم - مندر کے اسکول کھچا کھچ چل رہے ہیں.
معاشی ترقی کے ساتھ مذہب، عقیدے، خیال، مثالی، سموےدنا اور تعلیم کا ويوساييكر کس تیزی سے ہوتا ہے، اس کی براہ راست مثال یہاں دیکھی جا سکتی ہے.


مسا اکثر اپنے رجاي - گددے والی دکان میں مل جاتا.
مسا نے کئی جگہ کام کے کوششیں کی.
انتخاب - امتحانات میں وہ پاس نہ ہو پاتا. کام نہ لگے تو جھٹ لوگ کہہ دیتے ہیں کہ بھیا برادريواد، پردےشواد، ذات پرستی ہو یا کہ خیمے میں پیسہ ... نوکری حاصل کرنا سب کے دم کی بات نہیں.
عیسی ميا کہتے ہیں کہ 'ميم' کو نوکری کہاں؟
ملک میں موسلمانو سے بھید - احساس کیا جاتا ہے. تبھی تو اپنا مسا بے کار ہے.
مسا اپنے ابا کی بات ہنس کر ٹال جاتا. کہتا کہ نوکری سے کہیں اچھا ہے کہ اپنے ابا کی دکان میں مالک بن کر بیٹھا جائے.
پھر مسا دکان سمبھالتے - سمبھالتے پکا کاروباری آدمی بن گیا تھا.
چھٹے - چھماهے میں شہر آتا اور مسا میں ہو رہی تبديليا دیکھا کرتا.
پہلے وہ نمازیں شرائط سے نہ پڑھتا تھا. کبھی - کبھی تو عاشوراء کے روزے بھی اس سے چھوٹ جاتی تھی. لیکن ادھر پانچ ٹايم نماز پابندی سے ادا کرنے لگا تھا.
ایک بار آیا تو میں نے دیکھا کہ گدی پر مسا کی جگہ بغیر مونچھ کے لمبی کالی داڑھی والا کوئی نوجوان بیٹھا ہوا ہے. جس کے سر پر دپللي ٹوپی كھپكي ہوئی ہے. میں اس سے پوچھتا کہ بھائی یہاں تو اس میاں کی دکان ہوا کرتی تھی.
لیکن اس داڑھيدار نوجوان نے جب مجھے دیکھ مسکرا کر بیٹھنے کا اشارہ کیا تو میں نے پہچانا کہ یہ تو اپنا موسی ہے. سر پر گول ٹوپی دپللي، گھٹنوں تک لمبی قمیض اور ٹےهنو کے اوپر اٹھا پےجاما اس کی شناخت بن گئے.
ایک دم طالبان نظر آنے لگا تھا سسالا.
وہ اب مجھ سے باتیں کرتا تو اچانک جارحانہ ہو جاتا.
مجھے ہندو اکثریتی برادری کا نماندا مان کر مجھ پر زبانی حملے کیا کرتا.
کہتا -'' بابری مسجد گرانے کے بعد شہر کے دوکاندار اور گاہکوں کی ذہنیت میں پھاںک دكھلاي دینے لگی ہے. ایسے وقت میں سمجھدار - سيانے جانے کیوں خاموش ہیں؟ اب ہندو گاہک مسلمان دکانوں سے سامان خریدنے میں پرہیز کرتا ہے. تمہیں معلوم کہ پہلے گوشت کی دکانیں صرف مسلمانوں کی تھیں. لیکن اب ان لوگوں نے ہماری دکانوں سے گوشت خریدنا بند کر دیا ہے. سمجھے یار بھائی! گلی کے دوسری طرف ان کے آدمیوں نے 'جھٹکے' والی گوشت کی دکانیں کھول لی ہیں.''
میں نے اسے سمجھایا کہ ایسا اس لئے نہیں ہے کہ مسلمانوں کو ستانا ہے. شہر کی آبادی بڑھ گئی ہے. گوشت کی دکانیں کم تھیں، اس لئے صارفین کو دقت ہوتی تھی. مزید دکانیں رہیں گی تو شہریوں کو سہولت ہوتی ہے.''
موسی اپنی بات پر اڑا رہا -'' مسلمان گاہک کو جھک مار کر ہندوؤں کی دکان جانا پڑتا ہے. کیونکہ یار بھائی! سونا - چاندی، مٹھائیاں، کرانہ، کپڑا، دوائی اور مٹھاييو کی دکانیں تو صرف ان کے ہی پاس ہے. ہمارے پاس کیا ہے؟ بس، یہی درجي، دھنيا، مصور، كارپےٹر، كساي، موٹر - گاڑی مرمت کی دکانیں. جن میں هاڑ - توڑ محنت کے علاوہ آمدنی کتنی کم ہوتی ہے.''
مجھے لگا کہ موسی کا جیسے کوئی 'برین - واش' ہوا ہے.
'' تم سکے کا ایک ہی پہلو کیوں دیکھتے ہو موسی. کیا ملک کے تمام ہندوؤں کو حکومت نے ملازمت دے رکھی ہے؟ کیا بھوک، بیماری، بے کاری سے ہندو پریشان نہیں ہے؟''
وہ میری سنتا کہاں ہے، بس اپنی ہی پےلے رہتا ہے -'' بھوک، غربت، بیماری سے اگر مسلمان مرتے تو مجھے پھ़كر نہ ہوتی، لیکن ان فسادات میں انتظامیہ - حکومت کی طرف سے منصوبہ بند طریقہ سے مسلمانوں کو ٹارگیٹ بنا کر تباہ کرنے پر تمہاری کیا رائے ہے؟''
میں بتاتا کہ مسلمانوں کی حشر کی وجہ ناخواندگی، غربت اور شاہ - كھرچي کی عادت. اگر ایک مسلمان پچاس روپے روزانہ بھی کماتا ہے تو چاہتا ہے کہ اس کی باورچی خانے میں گوشت یا انڈے ضرور بنے. وہ اپنی باورچی خانے کے مقابلے نوابو - شهشاهو کے باورچيكھانے سے کرتا ہے. بھلے ہی اس کے بچے ننگ - دھڑنگ بغیر کپڑے - لتتے کے گھومے. ان کے بچے کتاب، سکول - فیس اور يونيپھارم کے فقدان کی وجہ سے پڑھ - لکھ نہیں پاتے ہیں اور کم عمر میں ہی مسترياے، درجيو، پےٹرو کے شاگرد بن جاتے ہیں. لڑکیاں کم عمر میں شادی دئے جانے کی وجہ سے ركتالپتا، ٹی وی اور دیگر اسادھي بیماریوں پيڈ़ت ہو جاتی ہیں. ہاری - بیماری کی حالت میں طبی جانچ نہ کراکر ميا بھائی جھاڑ - پھونک، گڈا - تاويذ، منت - منوتيو کے چکر میں ضائع ہو جاتا ہے.
میرے دلائل کو سن کر مسا اور تلملا جاتا اور مجھے سخت بازو قرار دیتا.
میں دو - چار دنوں کے لئے گھر آتا تھا سو مسا سے مزید ماتھاپچچي نہ کر، اس کی ہاں میں ہاں ملا کر نکل لیتا تھا.
گودھرا - كاڈ کے بعد سے تو وہ وكشپت ہونے کی حد تک جارحانہ ہو گیا تھا.
سننے میں آیا کہ اس کے ایک كھالو، جو کہ گجرات کی ایک بیکری میں کام کرتے تھے، 'رد عمل' کے نام پر انہیں زندہ جلا دیا گیا تھا.
میں اس کے پاس افسوس کا اظہار کرنے گیا تھا، کیونکہ گزشتہ ماہ اس ميا کی موت کی خبر مقامی اخبار میں دیکھی تھی. عیسی ميا ایک گنوان، ملنسار اور وتنپرست انسان تھے.
اس نے جب گودھرا کے بعد کے گجرات میں جو تشدد کے واقعات اس کے لئے ملک کے تمام ہندوؤں کو ذمہ دار ٹھہرایا تو مجھ سے رہا نہ گیا.
میں نے اپنا موقف رکھا تو وہ دوريوهار کی سرحد پار کرنے لگا.
مجھے کیا پتہ تھا کہ اس کے اندر پنپنے والی یہ بے چینی ایک دن آتش فشاں بن جائے گا.



پھر جب میں اپنے ہوم - شہر آیا تو ادتن موسی کی دکان کی طرف چلا گیا.
وہاں معلوم ہوا کہ موسی اپنے ابا عیسی ميا کی دکان کا سارا سامان ایک دوسرے دھنيا کو بیچ کر شہر چھوڑ کر کہیں چلا گیا ہے.
میں نے اپنے بڑے بھائی کامریڈ پردیپ سے جب اس بارے میں پوچھا تو انہوں نے بتایا کہ گجرات - كاڈ کے بعد موسی بدل گیا تھا. اس کے اندر دلیل - طاقت اور صبر تھوڑ بھی باقی نہیں بچا تھا.
ایک دن وہ گھر آ کر کامریڈ پردیپ سے بھی جھگڑ پڑا تھا کہ کیسے یقین کروں کہ آپ بھی دگاييو کے ساتھ نہیں تھے؟ کیا گجرات میں مذہب - جانبدار، غیر - مذہبی آدمی ایک بھی نہیں بچا؟ کہاں گئے آپ کے کیڈر کے لوگ جو گجرات میں فل - ٹايمر ہیں اور جو چاہتے تو کیا حالات کو تھوڑا بھی سنبھال نہیں پاتے؟
اس کے بعد میں موسی عرف مسا کو بھول ہی گیا تھا کہ اچانک ایک دن موسی میڈیا کی خبر بن گیا!
میرے سامنے پڑا تھا 'ترشول' اخبار کا صفحہ اول.
كوهر - سٹوری کے ساتھ محمد موسی عرف مسا کی تصویر.
مجھے لگا کہ ساتھ ہی کہیں ایڈیٹر کا كھڈن نہ چھپا ہو کہ اخبار میں جو تصویر چھپی ہے، وہ غلط چھپ گئی ہے.
لیکن میری سوچ سچ نہ ہو سکی.
وہ تصویر میرے بال - دوست مسا کی ہی تھی.
کیا بیت رہی ہوگی اس کے مرحوم ابا عیسی ميا کی روح پر.
ميلاد - شریف کی مهپھ़لو کی شان ہوا کرتے تھے اس ميا.
عیسی ميا پیغمبر حضرت محمد کی شان میں 'ناتيا - کلام' بہت میٹھی آواز اور ترننم کے ساتھ پیش کرتے کہ سننے والوں کا دل باغ - باغ ہو جاتا تھا.
'' بتها کے جانے والے میرا سلام لے جا
دربارے - مصطفی میں میرا پیام لے جا''
ہاں، جب وہ جذبات میں بہکر سر کی سمندر میں گوتے لگا رہے ہوتے تو ان کا چہرہ ضرور کچھ وكرت سا ہو جاتا تھا.
كاگرسي زمانے میں آزادی - یوم سماروڈ میں وجے - کالم چوک پر پرچم - روه کا پروگرام ہوتا تھا. وجے - کالم چیک میں، سکولوں کے بچے، پربھات - فیری کے بعد آ جاتے اور شہر کے گماني شہریوں کی موجودگی میں وہاں جھڈاروه کی پروگرام خوشحال ہوتا.
جانے کب سے اس پروگرام میں عیسی ميا کے ملک - دینداری مکمل گیت ضرور رکھا جاتا.
عیسی ميا کا عزیز گیت تھا -'' وتر کی راہ میں وطن کے نوجوا شہید ہو.!''
جب عیسی ميا کی درد سے لبرےذ آواز پھ़جا میں گونجتی تو سننے والے ملک - محبت کا جذبہ سے تڑپ اٹھتے -
'' پہاڑ تک بھی کانپنے لگے تیرے جنون سے
تو انقلاب ج़نداباد لکھ دے اپنے خون سے
چمن کے واسطے چمن کے باگبا ششهيد ہو
وطن کی راہ میں وطن کے نوجوا شہید ہو.''
عیسی ميا اس موقع پر اپنی بے کھچڑی داڑھی کو تراش کر آیا کرتے.
بغیر مونچھ اور ميا - کٹ داڑھی میں عیسی ميا کا چہرہ بڑا مزاحیہ نظر آتا.
ہم اس وقت بچے ہی تو تھے.
گیت کے الفاظ کو اداکاری کے ساتھ مطلب کا جامہ پہنانے کی کوشش کرتے عیسی ميا کا چہرہ وكرت ہوا نہیں کہ ہم بے سبب پیٹ پکڑ کر ہنسنے لگتے تھے.
کبھی - کبھی مسا کا موڈ ٹھیک دکھائی دیتا تو بھولا، عیسی ميا کے چہرے کی نقل کرتے ہوئے فقیروں کے سے انداز میں ہاتھ پھیلا کر ایک نغمہ گایا کرتا -
'' اولاد والوں پھولو - پھلو
بھوکے غریب کی یہ ہی دعا ہے ...!''
پوری کلاس اس وقت ہنس پڑتی.
ایسے وقت مسا، بھولا کو ماں - بہن کی گالیاں بكتا اسے دوڑا - دوڑاكر پیٹا کرتا.
پھر جب حکومتیں بدلي. گاندھی ٹوپی کی جگہ بھگوا گمچھے ہوا میں لهراے تب عیسی ميا سے 'خداوند - ماترم' گلوکاری کی فرمائیش کی گئی.
عیسی ميا 'وندے - ماترم' گا تو لیتے تھے، لیکن ان کا ہندی تلفظ اتنا درست نہ تھا. سو ان کی جگہ کشن بھےياجي نے لے لی جو کہ رامليلا میں بھجن گاتے تھے.
ایسے ملک - پرست، گنگا - جمنی تہذیب کے کیریئر عیسی ميا کا نوری - نظر، لخت - جگر، موسی ایک دہشتگرد کیسے بنا ...
یہ ایک ریسرچ کا موضوع ہے.



میرے سامنے ترشول اخبار ہے، جس میں موسی دہشت گرد کی تصویر ہے.
گھنی کالی داڑھی کے درمیان اس کا چہرہ تالبانيو کی یاد دلا رہا ہے.
میرا لگوٹيا یار موسی ایک دہشتگرد کیسے بنا، میں کیا کبھی جان